پانی پانی کر گئی مجھ کو قلندر کی يہ بات ۔ علامہ اقبال


پھر چراغ لالہ سے روشن ہوئے کوہ و دمن

مجھ کو پھر نغموں پہ اکسانے لگا مرغ چمن

پھول ہيں صحرا ميں يا پرياں قطار اندر قطار

اودے اودے ، نيلے نيلے ، پيلے پيلے پيرہن

برگ گل پر رکھ گئی شبنم کا موتي باد صبح

اور چمکاتی ہے اس موتی کو سورج کی کرن

حسن بے پروا کو اپني بے نقابی کے ليے

ہوں اگر شہروں سے بن پيارے تو شہر اچھے کہ بن

اپنے من ميں ڈوب کر پا جا سراغ زندگی

تو اگر ميرا نہيں بنتا نہ بن ، اپنا تو بن

من کی دنيا ! من کی دنيا سوز و مستي ، جذب و شوق

تن کی دنيا! تن کي دنيا سود و سودا ، مکروفن

من کی دولت ہاتھ آتی ہے تو پھر جاتی نہيں

تن کی دولت چھاؤں ہے ، آتا ہے دھن جاتا ہے دھن

من کي دنيا ميں نہ پايا ميں نے افرنگی کا راج

من کی دنيا ميں نہ ديکھے ميں نے شيخ و برہمن

پانی پانی کر گئی مجھ کو قلندر کي يہ بات

تو جھکا جب غير کے آگے ، نہ من تيرا نہ تن

Categories: Allama Iqbal, Beliefs | Tags: , , | Leave a comment

Post navigation

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

Create a free website or blog at WordPress.com.