کريں گے اہل نظر تازہ بستياں آباد ۔ علامہ اقبال


کريں گے اہل نظر تازہ بستياں آباد
مری نگاہ نہيں سوئے کوفہ و بغداد
يہ مدرسہ ، يہ جواں ، يہ سرور و رعنائی
انھي کے دم سے ہے ميخانہ فرنگ آباد
نہ فلسفی سے ، نہ ملا سے ہے غرض مجھ کو
… يہ دل کي موت ، وہ انديشہ و نظر کا فساد
فقيہ شہر کي تحقير! کيا مجال مری
مگر يہ بات کہ ميں ڈھونڈتا ہوں دل کي کشاد
خريد سکتے ہيں دنيا ميں عشرت پرويز
خدا کي دين ہے سرمايہ غم فرہاد
کيے ہيں فاش رموز قلندری ميں نے
کہ فکر مدرسہ و خانقاہ ہو آزاد
رشی کے فاقوں سے ٹوٹا نہ برہمن کا طلسم
عصا نہ ہو تو کليمی ہے کار بے بنياد

Categories: Allama Iqbal, Beliefs, Takmeel-e-Pakistan | Tags: , , , | Leave a comment

Post navigation

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.