جو مشکل ہے، تو اس مشکل کو آساں کر کے چھوڑوں گا – علامہ اقبال


نہيں منت کش تاب شنيدن داستاں ميری
خموشی گفتگو ہے بے زبانی ہے زباں ميری
يہ دستور زباں بندی ہے کيسا تيری محفل ميں
يہاں تو بات کرنے کو ترستی ہے زباں ميری
اٹھائے کچھ ورق لالے نے ، کچھ نرگس نے ، کچھ گل نے
چمن ميں ہر طرف بکھری ہوئی ہے داستاں ميری
اڑالی قمريوں نے ، طوطيوں نے ، عندلبوں نے
چمن والوں نے مل کر لوٹ لی طرز فغاں ميری
ٹپک اے شمع آنسو بن کے پروانے کی آنکھوں سے
سراپا درد ہوں حسرت بھری ہے داستاں ميری
الہی! پھر مزا کيا ہے يہاں دنيا ميں رہنے کا
حيات جاوداں ميری ، نہ مرگ ناگہاں ميری
مرا رونا نہيں ، رونا ہے يہ سارے گلستاں کا
وہ گل ہوں ميں ، خزاں ہر گل کی ہے گويا خزاں ميری
”دريں حسرت سرا عمريست افسون جرس دارم
ز فيض دل تپيدنہا خروش بے نفس دارم”
رياض دہر ميں نا آشنائے بزم عشرت ہوں
خوشی روتی ہے جس کو ، ميں وہ محروم مسرت ہوں
مری بگڑی ہوئی تقدير کو روتی ہے گويائی
ميں حرف زير لب ، شرمندۂ گوش سماعت ہوں
پريشاں ہوں ميں مشت خاک ، ليکن کچھ نہيں کھلتا
سکندر ہوں کہ آئينہ ہوں يا گرد کدورت ہوں
يہ سب کچھ ہے مگر ہستی مری مقصد ہے قدرت کا
سراپا نور ہو جس کی حقيقت ، ميں وہ ظلمت ہوں
خزينہ ہوں ، چھپايا مجھ کو مشت خاک صحرا نے
کسی کيا خبر ہے ميں کہاں ہوں کس کی دولت ہوں
نظر ميری نہيں ممنون سير عرصۂ ہستی
ميں وہ چھوٹی سی دنيا ہوں کہ آپ اپنی ولايت ہوں
نہ صہبا ہوں نہ ساقی ہوں نہ مستی ہوں نہ پيمانہ
ميں اس ميخا نۂ ہستی ميں ہر شے کی حقيقت ہوں
مجھے راز دو عالم دل کا آئينہ دکھاتا ہے
وہی کہتا ہوں جو کچھ سامنے آنکھوں کے آتا ہے
عطا ايسا بياں مجھ کو ہوا رنگيں بيانوں ميں
کہ بام عرش کے طائر ہيں ميرے ہم زبانوں ميں
اثر يہ بھی ہے اک ميرے جنون فتنہ ساماں کا
مرا آ ئينہ دل ہے قضا کے راز دانوں ميں
رلاتا ہے ترا نظارہ اے ہندوستاں! مجھ کو
کہ عبرت خيز ہے تيرا فسانہ سب فسانوں ميں
ديا رونا مجھے ايسا کہ سب کچھ دے ديا گويا
لکھا کلک ازل نے مجھ کو تيرے نوحہ خوانوں ميں
نشان برگ گل تک بھی نہ چھوڑ اس باغ ميں گلچيں
تري قسمت سے رزم آرائياں ہيں باغبانوں ميں
چھپاکر آستيں ميں بجلياں رکھی ہيں گردوں نے
عنادل باغ کے غافل نہ بيٹھيں آشيانوں ميں
سن اے غافل صدا ميری، يہ ايسی چيز ہے جس کو
وظيفہ جان کر پڑھتے ہيں طائر بوستانوں ميں
وطن کی فکر کر ناداں مصيبت آنے والی ہے
تری برباديوں کے مشورے ہيں آسمانوں ميں
ذرا ديکھ اس کو جو کچھ ہو رہا ہے، ہونے والا ہے
دھرا کيا ہے بھلا عہد کہن کی داستانوں ميں
يہ خاموشی کہاں تک؟ لذت فرياد پيدا کر
زميں پر تو ہو اور تيری صدا ہو آسمانوں ميں
نہ سمجھو گے تو مٹ جائو گے اے ہندوستاں والو
تمھاری داستاں تک بھی نہ ہو گی داستانوں ميں
يہی آئين قدرت ہے، يہی اسلوب فطرت ہے
جو ہے راہ عمل ميں گام زن، محبوب فطرت ہے
ہويدا آج اپنے زخم پنہاں کر کے چھوڑوں گا
لہو رو رو کے محفل کو گلستاں کر کے چھوڑوں گا
جلانا ہے مجھے ہر شمع دل کو سوز پنہاں سے
تری تاريک راتوں ميں چراغاں کر کے چھوڑں گا
مگر غنچوں کی صورت ہوں دل درد آشنا پيدا
چمن ميں مشت خاک اپنی پريشاں کر کے چھوڑں گا
پرونا ايک ہی تسبيح ميں ان بکھرے دانوں کو
جو مشکل ہے، تو اس مشکل کو آساں کر کے چھوڑوں گا
مجھے اے ہم نشيں رہنے دے شغل سينہ کاوی ميں
کہ ميں داغ محبت کو نماياں کر کے چھوڑوں گا
دکھا دوں گا جہاں کو جو مر ی آنکھوں نے ديکھا ہے
تجھے بھی صورت آئينہ حيراں کر کے چھوڑوں گا

Read the complete poem

Categories: Allama Iqbal | Tags: , , , , , , | 1 Comment

Post navigation

One thought on “جو مشکل ہے، تو اس مشکل کو آساں کر کے چھوڑوں گا – علامہ اقبال

  1. Noman Bokhari

    thanks for sharing.

    very deep…

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.