جب عشق سکھاتا ہے آداب خود آگاہی ۔ علامہ اقبال


جب عشق سکھاتا ہے آداب خود آگاہی

کھلتے ہيں غلاموں پر اسرار شہنشاہی

عطار ہو ، رومی ہو ، رازی ہو ، غزالی ہو

کچھ ہاتھ نہيں آتا بے آہ سحر گاہی

نوميد نہ ہو ان سے اے رہبر فرزانہ!

کم کوش تو ہيں ليکن بے ذوق نہيں راہی

اے طائر لاہوتی! اس رزق سے موت اچھی

جس رزق سے آتی ہو پرواز ميں کوتاہی

دارا و سکندر سے وہ مرد فقير اولی

ہو جس کی فقيری ميں بوئے اسد اللہی

آئين جوانمردں ، حق گوئی و بے باکی

اللہ کے شيروں کو آتی نہيں روباہی

Categories: Allama Iqbal | Tags: , , , , , , , | 1 Comment

Post navigation

One thought on “جب عشق سکھاتا ہے آداب خود آگاہی ۔ علامہ اقبال

  1. Reblogged this on rockporrt.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.