کہاں سے تونے اے اقبال سيکھی ہے يہ درويشی ۔ علامہ اقبال


مسلماں کے لہو ميں ہے سليقہ دل نوازي کا
مروت حسن عالم گير ہے مردان غازي کا

شکايت ہے مجھے يا رب! خداوندان مکتب سے
سبق شاہيں بچوں کو دے رہے ہيں خاکبازي کا

بہت مدت کے نخچيروں کا انداز نگہ بدلا
کہ ميں نے فاش کر ڈالا طريقہ شاہبازي کا

قلندر جز دو حرف لاالہ کچھ بھي نہيں رکھتا
فقيہ شہر قاروں ہے لغت ہائے حجازی کا

حديث بادہ و مينا و جام آتي نہيں مجھ کو
نہ کر خارا شگافوں سے تقاضا شيشہ سازی کا

کہاں سے تونے اے اقبال سيکھی ہے يہ درويشی
کہ چرچا پادشاہوں ميں ہے تيری بے نيازی کا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.