عکس اس کا مرے آئينہ ادراک ميں ہے ۔ علامہ اقبال


حادثہ وہ جو ابھي پردہ افلاک ميں ہے
عکس اس کا مرے آئينہ ادراک ميں ہے
نہ ستارے ميں ہے ، نے گردش افلاک ميں ہے
تيري تقدير مرے نالہ بے باک ميں ہے
يا مري آہ ميں کوئي شرر زندہ نہيں
… يا ذرا نم ابھي تيرے خس و خاشاک ميں ہے
کيا عجب ميري نوا ہائے سحر گاہي سے
زندہ ہو جائے وہ آتش کہ تري خاک ميں ہے
توڑ ڈالے گي يہي خاک طلسم شب و روز
گرچہ الجھي ہوئي تقدير کے پيچاک ميں ہے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.