ايسی نماز سے گزر ، ايسے امام سے گزر۔ علامہ اقبال


تو ابھي رہ گزر ميں ہے ، قيد مقام سے گزر
مصر و حجاز سے گزر ، پارس و شام سے گزر

جس کا عمل ہے بے غرض ، اس کي جزا کچھ اور ہے
حور و خيام سے گزر ، بادہ و جام سے گزر

گرچہ ہے دلکشا بہت حسن فرنگ کي بہار
طائرک بلند بال ، دانہ و دام سے گزر

کوہ شگاف تيري ضرب ، تجھ سے کشاد شرق و غرب
تيغ ہلال کي طرح عيش نيام سے گزر

تيرا امام بے حضور ، تيري نماز بے سرور
ايسي نماز سے گزر ، ايسے امام سے گزر

2 thoughts on “ايسی نماز سے گزر ، ايسے امام سے گزر۔ علامہ اقبال

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.